Dil mein ek laher si utthi hai abhi – Nasir Kazmi Ghazal



Dil mein ek laher si utthi hai abhi
Koi taaza hawa chali hai abhi
Dil mein ek laher si utthi hai abhi

shor barpa hai khana-e-dil mein
koi deewar si giri hai abhi
koi taza hawa chali hai abhi
Dil mein ek laher si utthi hai abhi

kuchh to nazuk mizaaj hain hum bhi
aur ye chote bhi nayi hai abhi
koi taza hawa chali hai abhi
Dil mein ek laher si utthi hai abhi

yaad ke be-nishaan jazeeron se
teri awaaz aa rahi hai abhi
koi taza hawa chali hai abhi
Dil mein ek laher si utthi hai abhi

shehar ki be-charaagh galiyon mein
zindagi tujh ko dhoondti hai abhi
koi taza hawa chali hai abhi
Dil mein ek laher si utthi hai abhi


7 تبصرے

  1. Anaya said,

    مئی 31, 2012 at 7:34 صبح

    ظلمت کے اندھیروں کو بھی چھٹ جانا ہے
    خورشیدصبح روشن بھی نکل آنا ہے

    پوری دنیا پے پھر سے ہمیں چھانا ہے
    کچھ دیر لگے گی وقت ایسابھی آنا ہے

    اللہ کے احکام کا بھی رکھنا ہے ہمیں پاس
    رسول اللہ سے کئے عہد کو بھی نبھانا ہے

    اپنے وطن پے نہ آنے دیں گے کوئی آنچ
    پرچمِ اسلام کو بھی دنیا میں لہرانا ہے

    بھول کر فرقہ واریت ایک ہو جائیں گے ہم
    کفر و شرک کو بھی دنیا سے مٹانا ہے

  2. UrduWebsite said,

    مارچ 26, 2012 at 7:38 صبح

    hmmmmmmm nice.

  3. AR said,

    فروری 18, 2012 at 12:56 شام

    beautiful

  4. honey said,

    فروری 16, 2012 at 12:27 شام

    very nice ghazal

  5. فروری 9, 2012 at 7:05 صبح

    بہت اچھا لگا، لا جواب غزل

  6. siraj khattak said,

    فروری 7, 2012 at 11:44 صبح

    Great i like it so much


Leave a Reply / Ap ka pegham

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: