Naseer Turabi Humsafar Ghazal Designed Urdu Poetry


Naseer Turabi Humsafar Ghazal


Humsafar in Urdu Text

وہ ہمسفر تھا مگر اُس سے ہمنوائی نہ تھی
کہ دھوپ چھاؤں کا عالم رہا، جدائی نہ تھی

عداوتیں تھیں، تغافل تھا، رنجشیں تھیں مگر
بچھڑنے والے میں سب کچھ تھا، بےوفائی نہ تھی

بچھڑتے وقت، اُن آنکھوں میں تھی ہماری غزل
غزل بھی وہ، جو کسی کو ابھی سنائی نہ تھی

کبھی یہ حال کہ دونوں میں یک دلی تھی بہت
کبھی یہ معاملہ، جیسے کہ آشنائی نہ تھی

کسے پکار رہا تھا وہ ڈوبتا ہوا دن
صدا تو آئی تھی، لیکن کوئی دہائی نہ تھی

عجیب ہوتی ہے راہ سخن بھی دیکھ نصیر
وہاں بھی آ گئے آخر، جہاں رسائی نہ تھی

====

Naseer Turabi Ghazal in Urdu Roman

Tarqe taluqaat pay…
roya na tu na main…..
lekin ye kya kay chain say….
soya tu na main..
Wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa magar us sey humnawai na thi…
Wo humsafar thaa magar us sey humnawai na thi…
Kay dhoob chaaon ka…..
Kay dhoob chaaon ka aalam raha judai na thi…
Wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa……..

Adaavatein theen..Taghaaful thaa
Ranjishein theen Magar..
Adaavatein theen..Taghaaful thaa…
Ranjishein theen Magar….
Bicharne walay main sab kuch thaa Bewafai na thi…
Bicharne walay main sab kuch thaa Bewafai na thi…
Kay dhoob chaaon ka…..
Kay dhoob chaaon ka aalam raha judai na thi…
wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa……..
Tarqe taluqaat pay…
roya na tu na main…..
lekin ye kya kay chain say….
soya tu na main..
Wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa magar us sey humnawai na thi…
Wo humsafar thaa magar us sey humnawai na thi…
Kay dhoob chaaon ka…..
Kay dhoob chaaon ka aalam raha judai na thi…
wo humsafar thaa……..
Wo humsafar thaa……


14 تبصرے

  1. Anaya said,

    جون 6, 2012 at 9:06 صبح

    گھر سے یہ سوچ کہ نکلا ہوں کہ مر جانا ہے
    اب کوئی راہ دکھا دے کہ کدھر جانا ہے

    جسم سے ساتھ نبھانے کی مت امید رکھو
    اس مسافر کو تو رستے میں ٹہر جانا ہے

    موت لمحے کی صدا زندگی عمروں کی پکار
    میں یہی سوچ کے زندہ ہوں کہ مر جانا ہے

    نشہ ایسا تھا کہ میخانے کو دُنیا سمجھا
    ہوش آیا، تو خیال آیا کہ گھر جانا ہے

    مرے جذبے کی بڑی قدر ہے لوگوں میں مگر
    میرے جذبے کو مرے ساتھ ہی مر جانا ہے

  2. Anaya said,

    جون 4, 2012 at 6:52 صبح

    جب ہوش نہ ہو سر کا وہ ہوتی ہے عبادت
    سر سجدے میں رکھنے سے عبادت نہیں ہوتی

    کچھ اپنے ہیں اپنوں کا گلہ کس سے کریں ہم
    کچھ غیر ہیں غیروں کی شکایت نہیں ہوتی

  3. Anaya said,

    جون 4, 2012 at 6:49 صبح

    آنْسُو بھر آئے آنکھ ميں ہر اک ہنسي کے بعد
    غم بن گيا نصيب ميرا ہر خوشي کے بعد

    نکلا تھا کارواں محبت کي راہ ميں
    ہر موڑ پہ نفرت کھڑي تھي ہر گلي کے بعد

    سوچا تھا پيار کا ميں سجاؤں گا گلستان
    ہر پھول جل گيا ميرا ، بن کر کلي کے بعد

    چاہت کي بےبسي کا يہ قصہ ہے مختصر
    دل نے سکون نا پايا کبھي دل لگي کے بعد

    اب راکھ ہي سميٹ تا ہوں آشيانے کي
    خود ہي جلا ديا تھا جسے آجزي کے بعد

    سنتے ہيں بعد مرنے کے ملتا ہے سب صلہ
    ديکھيں گے کيا ملے گا ہميں زندگي کے بعد

  4. Anaya said,

    جون 4, 2012 at 6:44 صبح

    اک قشّہ ھے وابستہ چاک پيرھن سے ميرے

    آج پھر درد ميں ڈوبے ھيں يہ الفاظ ميرے
    پھر چھيڑ گيا کوئي زخموں کے تار ميرے
    بڑي دير بھئي صبح دم مجھے آتے آتے
    چن بيٹھا تھا چمن سے کوئي حصۂ گلاب ميرے
    مقدر نے چنا ھو تو دوستوں پھر شکايت کيسي
    گلا تو خود سے ھے کہ يہ ھيں انتخاب ميرے
    ٹوٹتے تارے جو سجاتے تھے ھتھيلي پر ميري
    مجھ سے نالاں ھيں آج وہ دوست وہ احباب ميرے
    اک قصّہ وابسطہ ھے چاک پيرھن سے ميرے
    کہ خود درد بن گۓ جو تھے درد شناس ميرے

  5. Anaya said,

    مئی 31, 2012 at 7:30 صبح

    عجیب حال یہاں دھوپ کے دیار میں تھا
    شجر خود اپنے ہی سائے کے انتظار میں تھا

    نہ جانے کون سے موسم میں پھول کھلتے ہیں؟
    یہی سوال خزاں میں یہی بہار میں تھا

    ہر ایک سمت سے لشکر ہوا کے آئے تھے
    اور اک چراغ ہی میدانِ کار زار میں تھا

    کھنچی ہوئی تھی مرے گرد واہموں کی لکیر
    میں قید اپنے بنائے ہوئے حصار میں تھا

    کوئی مکیں تھا نہ مہمان آنے والا تھا
    تو پھر کواڑ کھلا کس کے انتظار میں تھا؟

    مرے شجر پہ مگر پھول پھل نہیں آئے
    وہ یوں تو پھلتے درختوں ہی کی قطار میں تھا

  6. Anaya said,

    مئی 29, 2012 at 7:59 صبح

    اگر کچھ نام دینا ھو
    مجھے انسان مت کہنا

    جدا چہرے، جدا سب کے بےشک نام ھوتے ہیں
    مگر انسانیت کے اب یہاں پر دام ھوتے ہیں

    تم میرے دام مت دینا
    مجھے یہ نام مت دینا

    اگر کچھ نام دینا ھو
    مجھے احساس کہہ دینا

    مگر ٹھہرو!
    مجھے احساس مت کہنا

    میرا بس نام رہ جائے مجھے ایسا نہیں رھنا
    مجھے احساس مت کہنا
    مجھے ساون ہی کہہ دینا

    مگر ٹھہرو!
    مجھے ساون بھی مت کہنا
    برستا ھے مگر
    رت کے بدلتے بیت جاتا ھے

    اگر کچھ نام دینا ھو
    مجھے آنسو ہی کہہ دینا
    جنم لینا کسی کی آنکھ میں
    رخسار پر مرنا
    یہی جس کی حقیقت ھے
    چلو آنسو ہی کہہ دینا

    مگر دیکھو!
    کسی کی آنکھ میں مجھ کو کبھی آنے نہیں دینا
    کہ قیمت آنسوؤں کی اب ادا
    تم سے نہیں ھو گی
    مجھے آنسو نہیں کہنا
    مجھے آنکھوں میں بستا ایک سپنا ھی کہہ دینا
    کہ سپنے آنکھوں میں تاروں کی طرح
    جھلملاتے ہیں

    مگر ٹھہرو!
    مجھے سپنا بھی مت کہنا
    کہ سپنے ٹوٹ جاتے ہیں
    مجھے اپنا بھی مت کہنا
    کہ اپنے روٹھ جاتے ہیں

  7. Anaya said,

    مئی 29, 2012 at 7:52 صبح

    یہاں تو خوف سا آتا ھے بات کرتے ہوئے
    میں اپنے شہر میں پھرتا ہوں*آج ڈرتے ہوئے

    ہماری تاک میں*صیاد کب سے بیٹھا تھا
    ذرا خیال نہ آیا اڑان بھرتے ہوئے

    یہاں کے لوگ تو اک دوسرے سے ڈرتے ھیں
    میں کس دیار میں*آیا تلاش کرتے ہوئے

    میں کھو نہ جاؤں کہیں ظلمتوں کی وادی میں
    یہ سوچتا ھے قمر بھی یہاں ابھرتے ہوئے

    یہ رنگ ، روپ یہ خوشبو تو عارضی شے ھے
    یہ بات مجھ سے کہی پھول نے بکھرتے ہوئے

  8. Anaya said,

    مئی 28, 2012 at 6:27 صبح

    Koi mausam ho dil mai hai tumhaari yaad ka mausam,
    K badla he nahin jana tumharay baad ka mausam,
    Na koi gham khizaaan ka hai na khuwahish hai baharon ki,
    Humaray sath to har pal hai kisi ki yaad ka mausam ..

  9. Anaya said,

    مئی 28, 2012 at 6:21 صبح

    Meri Dua Hai K Khush Raho Tum
    Mile Na Koi Ghum Jahan Bhi Raho Tum
    Samandar Ki Tarah Dil Hai Gehra Tera
    Khushioun Sa Bhara Rahe Daman Tera
    Tum Jo Kaho Woh Har Khawahish Poori Ho Tumhari
    Khuda Se Bus Yahi Dua Hai Hamari
    Tohfa Kya Doon Tumhain Duaoun K Siwa
    ………K Khuda Rahe Tum Se Raazi Sadaa

  10. Anaya said,

    مئی 28, 2012 at 6:15 صبح

    Dor ho k bhi apke pass raha kerty hain
    teri yadon k sahary jia kerty kain
    tujh se koi shikayat na gila kerty hain
    tu salamat rahy bas yehi dua kerty hain……..

  11. Anaya said,

    مئی 28, 2012 at 6:14 صبح

    ” Dua Ki soorat Mein Uss Ki Khaatir ”
    ” Jo meray honton se lafz nikaly ”
    ” Jo mari Aankhon se ashk niklay ”
    …” Unhi k badley Mein ae KHUDAYA ”
    Jab bhi us ka naseeb likhna
    ” UROOJ likhna ”
    ” KAMAL likhna ”
    ” Kabhi na harf-e-ZAWAL likhna ”
    ” Khusian likhna ”
    ” or us ki umr-e-draaz likhna…………

  12. Anaya said,

    مئی 28, 2012 at 6:11 صبح

    kash ye dunia haseen hoti
    khud k chahne sy her dua kabool hoti
    khny k liye tu sbi apny hn
    pr kash koi aisa hota
    jisay mere dard sy b takleef hoti…….

  13. Anaya said,

    مئی 28, 2012 at 6:09 صبح

    Khushi mili to kai dard muj se rooth gae
    Duaa karo k me phir se udaas ho jaon…!

  14. Muslim Names said,

    اپریل 12, 2012 at 9:25 صبح

    Very nice poem, I really love it, thanks much


Leave a Reply / Ap ka pegham

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: