Hazrat Jon Elia (Jaun allia) ki Shayari


Chand Gazal or Ashaar apki khidmat main..

Aapp bhi share karain comment main…

Shukria..

 

rishta-e-Dil tere zamaane mein
rasm hi kya nibahni hoti
muskuraaye hum us se miltay waqt
ro na paRtay agar khushi hoti?

meri aql-o-hosh ki sab haalatein
tumne saanche mein junoo.n kay Dhaal deen
kar liya tha main ne ehd-e-tark-e-ishq
tumne phir baahe.n gale mein Daal deen

sharm, dehshat, jhijhak, pareeshani
naaz se kaam kiun nahin letin
“aap”, “woh”, “ji”,”magar” yeh sab kya hai
tum mera naam kyun nahin letin

hai mohabbat hayaat ki lazzat
warna kuchh lazzat-e-hayaat nahin
kya ijazat hai aik baat kahun
woh…magar khair koi baat nahin

ehd-e-waabastagi guzaar kay main
wajh-e-waabastagi ko bhool gaya
yaani tum woh ho! waaqai? Had hai!
main to sach much sabhi ko bhool gaya!

ajab tha us ki dildaari ka andaaz
woh barson baad jab mujhse mila hai
bhala main poochhta us se to kaise
mataa-e-jaa.n tumhara naam kya hai?

saal ha saal aur aik lamha
koi bhi to na in mein bal aaya
khud hi ik dar pe main ne dastak di
khud hi laRka sa main nikal aaya


hai yeh baazaar jhoo ka baazaar
to yahi jins kiun na tole.n hum
kar kay ik doosray se ehd-e-wafa
aao kuchh dair jhooT bole.n hum

Jaun Elia

=============

 

ham to jaise yahaa.N ke the hii nahii.n
dhuup the saayabaa.N ke the hii nahii.n

raaste kaaravaa.N ke saath rahe
marhale kaaravaa.N ke the hii nahii.n

 

=====

 

hum to jaisey wahaan key they hi nahin
dhoop they sayaban key they hi nahin

raastey karavan key sath rahey
marhaley karavan key they hi nahin

ab hamara makaan kis kaa hai
hum to apaney makaan key they hi nahin

in ko aandhi main hi bikharna tha
baal-o-par yahan key they hi nahin

us gali ney yeh sun ke saber kiya
janey waley yahan key they hi nahin

ho teri Khak-e-astan pey salaam
ham terey astan key they hi nahin

 

==============

 

 

 

har baar mere saamane aati rahi ho tum
har baar tum se mil ke bicharrtaa rahaa hooN main
tum kaun ho ye Khud bhii nahin jaanati ho tum
main kaun hooN ye Khud bhii nahin jaanataa hooN main
tum mujh ko jaan kar hi parri ho aazaab mein
aur is tarah Khud apani sazaa ban gayaa hooN main

tum jis zamiin par ho main us kaa Khudaa nahin
bas sar basar aziiyat-o-aazaar hi raho
bezaar ho ga_ii ho bahut zindagii se tum
jab bas mein kuchh nahiin hai to bezaar hii raho
tum ko yahaaN ke saayaa-e-partau se kyaa Garaz
tum apane haq men bich ki divaar hi raho

 

 

======

main ibtadaa-e-ishq mein bemahar hii rahaa
tum intahaa-e-ishq kaa miyaar hii raho
tum Khoon thokati ho ye sun kar Khushii hoi
is rang is adaa mein bhi pur_kaar hii raho

main ne ye kab kahaa thaa ke muhabbat mein hai najaat
main ne ye kab kahaa thaa ke vafadaar hii raho
apanii mataa-e-naaz luTaa kar mere liye
baazaar-e-iltafaat mein naadaar hi raho

jab main tumhen nishaat-e-muhabbat na de sakaa
Gam mein kabhii sukuun-e-rafaaqat na de sakaa
jab mere saare charaaG-e-tamannaa havaa ke hain
jab mere saare Khvaab kisii bevafaa ke hain
phir mujhe chaahane kaa tumhen ko_ii haq nahin


11 تبصرے

  1. AreebaZahra said,

    نومبر 1, 2015 at 6:12 شام

    انہی کو راہِ طلب خار دار دی گئی ہے
    وہ جن کو مملکتِ اعتبار دی گئی ہے

    ذرا سی دیر تو سو لیں یہ اہلِِ دل کہ انہیں
    بہت طویل شبِ انتظار دی گئی ہے

    گئے دنوں میں ہمارا تھا قصرِ خوش آثار
    اب اپنے نام کی تختی اتار دی گئی ہے

    لہو لہان اجالوں کا دن ڈھلا آخر
    سیاہ کرب زدہ شب گزار دی گئی ہے

    ہمارے پاس تھا کیا خواب وہ تو ٹوٹ گیا
    اک اور چیز تھی جان’تجھ پر وار دی گئی ہے

    ہماری دشت نوردی کو اک فسانے میں
    بشارتِ شجرِ سایہ دار دی گئی ہے

  2. AreebaZahra said,

    اکتوبر 17, 2015 at 10:50 صبح

    لوگ منتظر ہی رہے کے ھمیں ٹوٹتا ہوا دیکھیں
    اور ہم ضبط کرتے کرتے پتھر کے ہو گئے

  3. AreebaZahra said,

    اکتوبر 17, 2015 at 10:50 صبح

    دل تجھے ناز ہے جس شخص کی دلداری پر
    دیکھ اب وہ بھی اُتر آیا اداکاری پر

    میں نے دشمن کو جگایا تو بہت تھا لیکن
    احتجاجاً نہیں جاگا مری بیداری پر

    آدمی، آدمی کو کھائے چلا جاتا ہے
    کچھ تو تحقیق کرو اس نئی بیماری پر

    کبھی اِس جرم پہ سر کاٹ دئے جاتے تھے
    اب تو انعام دیا جاتا ہے غدّاری پر

    تیری قربت کا نشہ ٹوٹ رہا ہے مجھ میں
    اس قدر سہل نہ ہو تو مری دشواری پر

    مجھ میں یوں تازہ ملاقات کے موسم جاگے
    آئینہ ہنسنے لگا ہے مری تیاری پر

    کوئی دیکھے بھرے بازار کی ویرانی کو
    کچھ نہ کچھ مفت ہے ہر شے کی خریداری پر

    بس یہی وقت ہے سچ منہ سے نکل جانے دو
    لوگ اُتر آئے ہیں ظالم کی طرف داری پر

  4. AreebaZahra said,

    اکتوبر 15, 2015 at 8:07 صبح

    دل میں ایک لہر سی اُٹھی ہے ابھی
    کوئی تازہ ہوا چلی ہے ابھی

    شور برپا ہے خانۂ دِل میں
    کوئی دیوار سی گِری ہے ابھی

    کچھ تو نازُک مِزاج ہیں ہم بھی
    اور یہ چوٹ بھی نئی ہے ابھی

    بھری دُنیا میں دِل نہیں لگتا
    جانے کِس چیز کی کمی ہے ابھی

    شہر کی بے چراغ گلیوں میں
    زندگی تجھ کو ڈھونڈتی ہے ابھی

    تم تو یارو! ابھی سے اُٹھ بیٹھے
    شہر میں رات جاگتی ہے ابھی

    وقت اچھا بھی آئے گا ناصرؔ
    غم نہ کر زندگی پڑی ہے ابھی

  5. AreebaZahra said,

    اکتوبر 14, 2015 at 3:33 شام

    تم سے الفت کے تقاضے نہ نباہے جاتے
    ورنہ ہم کو بھی تمنا تھی کہ چاہے جاتے

    دل کے ماروں کا نہ کر غم کہ یہ اندوہ نصیب
    زخم بھی دل میں نہ ہوتا تو کراہے جاتے

    ہم نگاہی کی ہمیں خود بھی کہاں تھی توفیق
    کم نگاہی کے لیے عذر نا چاہے جاتے

    کاش اے ابرِ بہاری! تیرے بہکے سے قدم
    میری امید کے صحرا بھی گاہے جاتے

    ہم بھی کیوں دہر کی رفتار سے ہوتے پامال
    ہم بھی ہر لغزش مستی کو سراہے جاتے

    لذت درد سے آسودہ کہاں دل والے
    ہے فقط درد کی حسرت میں کراہے جاتے

    دی نہ مہلت ہمیں ہستی نے وفا کی ورنہ
    اور کچھ دن غم ہستی سے نبھائے جاتے

  6. AreebaZahra said,

    اکتوبر 14, 2015 at 3:29 شام

    ٹھیک ہے خود کو ہم بدلتے ہیں
    شکریہ مشورت کا چلتے ہیں

    ہو رہا ہوں میں کس طرح برباد
    دیکھنے والے ہاتھ ملتے ہیں

    کیا تکلف کریں‌یہ کہنے میں
    جو بھی خوش ہے ہم اس سے جلتے ہیں

    ہے اُسے دُور کا سفر درپیش
    ہم سنبھالے نہیں سنبھلتے ہیں

    تم بنو رنگ،تم بنو خوش بُو
    ہم تو اپنے سخن میں‌ ڈھلتے ہیں

    ہے عجب فیصلے کا صحرا بھی
    چل نہ پڑیے تو پاؤں جلتے ہیں

  7. AreebaZahra said,

    اکتوبر 14, 2015 at 3:28 شام

    Nice poetry by jon elia

  8. ikhlaq saral Gilgiti said,

    اگست 18, 2015 at 6:12 صبح

    mujy mehsoos hota ha ki muj se.
    .
    .
    yaqwwnan ek jisarrat hogi ha .
    .
    tujy koi shikayat to na hogi.
    .
    mujy tum se muhabat hogi ha..H_J_E

  9. bluestar said,

    اکتوبر 30, 2012 at 6:28 صبح

    your poetry is really very gooooooooooooooood i like very much

  10. Ahmad said,

    اکتوبر 28, 2012 at 8:57 شام

    Jhon Elia

    Mujh Ko Begaana Kar Gaye Mere Din
    Mujh Se Ho Kar Guzar Gaye Mere Din

    Ab Na Koi Din Mere Ghar Jaye Ga
    Jaanay Kis Ke Ghar Gaye Mere Din

    Ab Nahi Hain Mere Koi Din Raat
    Ke Mujh Hee Ko Basar Gaye Mere Din

    Saari Raatain Gayin Meri Be-Haal
    Mere Din ! Be-Asar Gaye Mere Din

    Khosha Ab Intezaar Hai Na Umeed
    Yaar Yaaran ! Sudhar Gaye Ab Din

    Ab Mein Bas Reh Gaya Hun Raaton Mein
    Mar Gaye “Jhon” ! Mar Gaye Mere Din

  11. Ahmad said,

    اکتوبر 25, 2012 at 4:41 شام

    Jaun Elia (Urdu: جون ایلیا, December 14, 1931 – November 8, 2002) was a notable Pakistani Urdu poet, philosopher, biographer, and scholar. He was the brother of journalist and psychoanalyst Rais Amrohvi and journalist and philosopher Syed Muhammad Taqi, and husband of columnist Zahida Hina. He was fluent in Arabic, English, Persian, Sanskrit and Hebrew.


Leave a Reply / Ap ka pegham

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: